ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

کشمیر کی ریشی صوفی روایات پر کشمیر یونیورسٹی میں ایک روزہ قومی سمینار کا اِنعقاد

   179 Views   |      |   Tuesday, January, 26, 2021

سری نگر/22؍اکتوبر//لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا جو کہ کشمیر یونیورسٹی کے چانسلر بھی ہیں ، نے آج کشمیر یونیورسٹی میں منعقدہ کشمیر میں ریشی صوفی روایات پر ایک روزہ قومی سیمنار کا افتتاح کیا ۔ قومی سیمنار کا انعقاد کشمیر یونیورسٹی کے سنٹر فار شیخ العالم سٹڈیز ، مرکزِ نور نے گاندھی بھون کشمیر یونیورسٹی میں کیا ۔ اس موقعہ پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ موجودہ عالمی بحران اور علاقائی صورتحال کے دوران ریشی اور صوفی تعلیمات پر عملدرآمد اور انہیں عام کرنے کیلئے یہ وقت موزوں ہے ۔ انہوں نے کشمیر کی ثقافتی تبدیلی میں ریشیوں اور صوفیوں کے اہم کردار کو بحال کرنے کی ضرورت پر زور دیا ۔ انہوں نے معروف سنت للیشوری کے الفاظ دوہرائے جس میں انہوں نے اپنے اندر خدا تلاش کرنے اور لوگوں کو مذہب کی بنیاد پر تقسیم نہ کرنے پر زور دیا ہے ۔ شیخ نور الدین ولی ؒ جنہیں نُند ریشی کے نام سے بھی یاد کیا جاتا ہے کا ذکر کرتے ہوئے لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ وہ بابصیرت ولی تھے جن کے عقیدت مندوں میں ہندو اور مسلمان دونوں شامل ہیں انہوں نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ حقیقی کشمیریت کی جڑیں تلاش کریں جو آفاقی برادری اور مختلف رنگ و نسل کے لوگوں کے مابین یکسانیت پر مبنی ہے ۔لفٹینٹ گورنر نے پروفیسر بشر بشیر اور پروفیسر طلعت احمد کو کشمیر میں صوفی روایات کی بحالی کیلئے اُن کی جانب سے کی گئی کوششوں کو سراہا ۔ اس موقعہ پر لفٹینٹ گورنر کے مشیر کے کے شرما جو تقریب پر مہمانِ ذی وقار تھے نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ کشمیر یونیورسٹی کے وائس چانسلر نے صدارتی خطبے میں کشمیر میں ریشی صوفی روایات کو اجاگر کیا ۔ پروفیسر بشر بشیر نے بھی شیخ العالم ؒ کے کشمیر میں بھائی چارے اور مذہبی یگانگت کو فروغ دینے کے رول پر روشنی ڈالی ۔ اس سے قبل چئیر مین مرکزِ نور پروفیسر جی این خاکی نے تعریفی خطبے میں اس نوعیت کے علمی تقاریب کے انعقاد کی اہمیت کو اجاگر کیا ۔ سیمنار میں ڈویژنل کمشنر کشمیر ، سیکرٹری محکمہ امور نوجوان ، کھیل کود سیاحت و ثقافت ، وائس چانسلر سی یو کے ، ڈائریکٹر این آئی ٹی سرینگر اور دیگر مذہبی علماء ، قلمکار ، شعرا ،منتظمین ، ماہرین تعلیم اور معروف شخصیات موجود تھیں ۔ (انفو)

متعلقہ خبریں

تحریر: رشید پروین ؔسوپور سلسلہ روزو شب نقش گر حادثات
سلسلہ روزو شب اصل حیات و ممات
سلسلہ روزو شب تارِ حریر.

بہ گلشن بدرنی چھس پننہ تہ پننہ انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکین تمام ارکانن ہندہ طرفہ کشیر ہندین سرکردہ تہ نمایندہ.

گزشتہ شب گلشن کلچرل فورم کشمیراور لسہ خان فدا فاؤنڈیشن نے مشترکہ طور سلسلہ قادریہ وفاضلی کے معروف صوفی بزرگ اور.

تحریر: حافظ میر ابراھیم سلفی عشرتی گھر کی محبت کا مزا بھول گئے
کھا کے لندن کی ہوا عہد وفا بھول گئے
قوم کے غم.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.