ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

کشمیری اور اردو زبان کے جواں سالہ شاعر مجاز راجپوری انتقال کر گئے

   183 Views   |      |   Thursday, January, 21, 2021

مرحوم کا انتقال اردو اور کشمیری زبان کیلئے بڑا نقصان / ادب نواز
پلوامہ / تنہا ایاز/ جنوبی ضلع راجپورہ پلوامہ سے تعلق رکھنے والے اردو اور کشمیری زبان کے جواں سالہ شاعر مجاز راجپوری انتقال کر گئے۔ مرحوم کے انتقال پر وادی کے تمام ادبی، سماجی، صحافتی اور دینی انجمنوں نے دُکھ کا اظہار کر تے ہوئے مرحوم کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کر تے ہوئے کہا کہ مرحوم کا انتقال کشمیری اور اردو زبان کیلئے ایک بہت بڑا سانحہ ہے۔ اس خلاء کو پُر کرنا نہایت ہی مشکل ہے۔ دریں اثناء ڈسڑکٹ کلچرل سوسائٹی ، مراز ادبی سنگم اور اے آر ازاد میموریل فائونڈیشن نے جواں سالہ شاعر کے انتقال پر گہرے صدمے کا اظہار کر تے ہوئے مرحوم کی ادبی خدمات کو سراہایا۔ تفصیلات کے مطابق راجپورہ پلوامہ کے معروف شاعر فاروق احمد ڈار عرف مجاز راجپوری داعی اجل کو لبیک کہہ گئے۔ مرحوم کے نماز جنازہ میں لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کر تے ہوئے انہیں پُر نم آنکھوں کے ساتھ مقامی قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا۔ انکے انتقال پر وادی کے تمام ادبی تنظیموں نے زبردست دکھ کا اظہار کر تے ہوئے کہا کہ جواں سالہ شاعر مجاز راجپوری کے انتقال سے کشمیر اور اردو زبان کو بڑا نقصان پہنچا ہے۔ اس دوران ڈسڑکٹ کلچرل سوسائٹی پلوامہ کا ایک تعزیتی اجلاس اٹس اپ گروپ پر آن لائن منعقد ہوا۔ تعزیتی اجلاس میں شاعر غلام رسول مشکور، غلام محمد دلشاد، جلال الدین دلنواز، گل شکیل ترالی ، پیر زادہ اعجاز احمد کے علاوہ دیگر کئی ادیبوں نے شرکت کر تے ہوئے مرحوم کی ادبی خدمات کو سراہایا۔ شاعر غلام رسول مشکور نے جواں سالہ شاعر کو خراج عقیدت پیش کر تے ہوئے کہا کہ مجاز راجپوری کا انتقال کشمیری زبان کیلئے بڑا سانحہ ہے۔ اس خلاء کو پُر کرنا نہایت ہی مشکل ہے۔ ادھر جلال الدین دلنواز نے مرحوم کی ادبی خدمات کو سراہاتے ہوئے انہیں ایک بہترین شاعر قرار دیا۔ ڈسڑکٹ کلچر ل سوسائٹی پلوامہ کے وائس چیرمین غلام محمد دلشاد نے مجاز راجپوری کے انتقال پر سخت رنج کا اظہار کر تے ہوئے کہا کہ مرحوم ایک بہترین انسان ہونے کے ساتھ ساتھ ایک اچھے قلمکار بھی تھے۔اُدھر مرحوم ادبی تنظیم ، مراز ادبی سنگم نے جواں سالہ شاعر اور قلمکار مجاز راجپوری کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔ نمائندے تنہا ایاز کے مطابق مراز ادبی سنگم کا ایک تعزیتی اجلاس صدر ریاض انزنوں کی صدارت میں منعقد ہوا۔ آن لائن تعزیتی اجلاس میں یوسف جہانگیر ، اظہار مبشر، منظور خالد، میر روشن خیال، ڈاکٹر شیدا حسین شیدا، مشروح نصیب آبادی کے علاوہ دیگر شعراء نے شرکت کی۔ تعزیتی اجلاس کے دوران مجاز راجپوری کی ادبی خدمات کی زبردست سراہنا کی گئی۔ مراز ادبی سنگم کے صدر نے ضلع پلوامہ کے ادبی انجمنوں سے درخواست کی ہے کہ وہ مجاز راجپوری کے کلام کو جمع کر کے شائع کرے۔ جس میں انہیں مراز ادبی سنگم بھر پور تعاون فراہم کرے گی۔ اس دوران وادی کے معروف شاعر ادیب قلمکار عبدالرحمان فدا نے جواں سالہ شاعر مجاز راجپوری کے اچانک انتقال پر زبردست دُکھ کا اظہار کر تے ہوئے مرحوم کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کیا۔ نمائندے کے مطابق جوا ں سالہ شاعر نے آخری بار ڈسڑکٹ کلچرل سوسائٹی پلوامہ کے حسین مشاعرہ میں آن لائن شرکت کی تھی اور اپنے خوبصورت الفاظ سے شہدائے کربلا کو خراج عقیدت پیش کیاتھا۔مرحوم کے انتقال سے راجپوری پلوامہ میں ہر کسی کی آنکھ نم ہے۔ مقامی لوگوں نے مرحوم کو پُر نم آنکھوں کے ساتھ الوداع کر تے ہوئے کہا کہ وہ ہمیشہ غریبوں، مسکینوں کو مدت کر تے تھے۔

متعلقہ خبریں

تحریر: رشید پروین ؔسوپور سلسلہ روزو شب نقش گر حادثات
سلسلہ روزو شب اصل حیات و ممات
سلسلہ روزو شب تارِ حریر.

بہ گلشن بدرنی چھس پننہ تہ پننہ انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکین تمام ارکانن ہندہ طرفہ کشیر ہندین سرکردہ تہ نمایندہ.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار
روایتی فیرن میں تبدیلی،بازاروں میں کوٹ.

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز انیڈ سپورٹس کی مجانب سے میکس ویل کالج.