ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

محبوبہ مفتی کو ملک سے بغاوت کرنے کی پادائش میں فوری طورپر گرفتار کیا جانا.

محبوبہ مفتی علیحدگی پسندوں کی بولی بول رہی ہیں۔ پیپلز الائنس کی کوئی عوامی.

عصمت دری کرنے والوں کے حق میں ترنگا ریلی نکال کر بھاجپا نے کی ترنگے کی توہین:محبوبہ.

پانپور طرز پر ہی ذونی مر علاقے میں بھی نئی حکمت عملی اپنائی گئی اور جنگجو کو مار گرانے کی خاطر ٹیر گیس شلنگ کی گئی /آئی جی کشمیر پریس کانفرنس

   92 Views   |      |   Monday, October, 26, 2020

سرینگر21//جون//آئی جی کشمیر کا کہنا ہے پانپور طرز پر جیسے سیکورٹی فورسز نے عسکریت پسندوں کو باہر لانے کی خاطر ٹیر گیس شلنگ کی ایسے ہی زونی مر علاقے میں بھی سیکورٹی فورسز نے رہائشی مکان کو بچانے کی خاطر ٹیر گیس شل داغے۔ انہوںنے کہاکہ سیکورٹی فورسز نے اس بات کا بھر پور خیال رکھا کہ رہائشی مکان کو کوئی نقصان نہ پہنچے ۔ انہوںنے کہاکہ نئی حکمت عملی سے سیکورٹی ایجنسیاں لوگوں کے دل جیتنے کی کوشش کررہے ہیں۔آئی جی کشمیر کے مطابق وادی کشمیر میں فی الوقت ایک سے دو سو کے قریب جنگجو سرگرم ہے۔ انہوںنے کہاکہ رواں سال کے دوران ابتک 106جنگجوئوں کو مار گرایا گیا ہے۔ خبررساں ایجنسی یو پی آئی کے مطابق پولیس کنٹرو ل روم کشمیر میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران آئی جی کشمیر وجے کمار نے بتا یا کہ ذونی مر سرینگر میں تین عسکریت پسندوں کو تصادم کے دوران جاں بحق کیا گیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ تینوں مقامی ہے جن میں سے دو کی شناخت ہو چکی ہے جبکہ تیسرے کی شناخت کیلئے والدین کو طلب کیا گیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ زونی مر علاقے میں بھی سیکورٹی فورسز نے پانپو ر جیسی حکمت عملی اپنائی ۔ انہوںنے کہاکہ رہائشی مکان کو نقصان سے بچانے کی خاطر سیکورٹی فورسز نے عسکریت پسندوں کو باہر لانے کی خاطر ٹیر گیس شلنگ کی جس کے بعداُنہیں مار گرایا گیا۔ انہوںنے کہاکہ اس طرح کی حکمت عملی کامیاب ہو رہی ہیں جبکہ ہم لوگوں کے دل بھی جیت رہے ہیں۔ آئی جی کشمیر کا کہنا تھا کہ نئی حکمت عملی اپنانے کے ثمر آور نتائج برآمد ہور ہے ہیں جبکہ لوگ بھی اس کی سراہنا کر رہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ اگر چہ مہلوک عسکریت پسند حزب کے ساتھ وابستہ بتائے جارہے ہیں تاہم سیکورٹی ایجنسیوں کے لسٹ میں تینوں آئی ایس جے کے سے وابستہ ہیں۔ آئی جی کشمیر نے بتایا کہ جھڑپ کے دوران جاں بحق ہوئے جنگجو شکور فاروق نے ہی پاندچھ سرینگر میں بارڈر سیکورٹی فورسز اہلکاروں پر فائرنگ کی تھی جس کے نتیجے میں دو اہلکار ہلاک ہوئے تھے جبکہ مذکورہ جنگجو نے اُن کے ہتھیار بھی چھینے تھے۔ انہوںنے کہاکہ پاندچھ میں دو بی ایس ایف اہلکاروں کی ہلاکت کے بعد پولیس نے کئی افراد کو پوچھ تاچھ کے سلسلے میں طلب کیا جنہوں نے بتایا کہ شکور فاروق نے ہی بی ایس ایف اہلاکروں پر فائرنگ کی تھی۔ آئی جی کشمیر کے مطابق زونی مر علاقے میں جاں بحق ہوئے دو جنگجوئوں کی شناخت مکمل ہو چکی ہے جبکہ تیسرے جنگجو کی شناخت کے حوالے سے والدین کو طلب کیا گیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ تیسرے جنگجو کی شناخت کے حوالے سے غلط فہمی پیدا ہوئی تھی تاہم اب والدین اُس کی شناخت کیلئے آئے ہیں۔ا نہوںنے کہاکہ تینوں جنگجوئوں کو والدین کی موجودگی میں کپواڑہ یا ہندواڑہ میں سپرد خاک کیا جائے گا۔ آئی جی کشمیر کا کہنا تھا کہ وادی کشمیر میں سرگرم عسکریت پسندوں کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن جاری ہے جس کے زمینی سطح پر ثمر آور نتائج برآمد ہو رہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ وہ دن دور نہیں جب پوری وادی کو عسکریت پاک کیا جائے گا۔ آئی جی کشمیر نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ وادی کشمیر میں فی الوقت ایک سے دو سو کے قریب جنگجو سرگرم ہیں۔ انہوںنے کہاکہ رواں سال کے دوران ابتک 106جنگجوئوں کو مار گرایا گیا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ سرگرم عسکریت پسندوں کے خلاف چلائے جارہے آپریشن کے مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں۔ سرینگر میں سرگرم عسکریت پسندوں کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں آئی جی کشمیر نے بتایا کہ جنگجو مخالف آپریشن جاری نہ رکھنے کا یہ مقصد نہیں ہے کہ ضلع میں جنگجو سرگرم نہیں۔ آئی جی کشمیر کے مطابق سرینگر ضلع میں اس وقت دو عسکریت پسند سرگرم ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ سینٹرل کشمیر ہونے کے پیش نظر عسکریت پسندوں کو سرینگر سے ہی فنڈ جمع کرکے دوسرے اضلاع تک پہنچا رہے ہیں۔(یو پی آئی)

متعلقہ خبریں

محبوبہ مفتی کو ملک سے بغاوت کرنے کی پادائش میں فوری طورپر گرفتار کیا جانا چاہئے /رویندر رینا
سرینگر24//اکتوبر///.

محبوبہ مفتی علیحدگی پسندوں کی بولی بول رہی ہیں۔ پیپلز الائنس کی کوئی عوامی اہمیت نہیں ہے /مرکزی وزیر جتندر سنگھ

عصمت دری کرنے والوں کے حق میں ترنگا ریلی نکال کر بھاجپا نے کی ترنگے کی توہین:محبوبہ مفتی سرینگر؍24، اکتوبر ؍ ؍ پی.

تنظیمی ڈھانچہ تشکیل ،ڈاکٹر فاروق سربراہ ،سجاد غنی لون ترجمان مقرر ، جموں وکشمیرکا پرچم اتحاد کی علامت ہوگا
عوامی.

افسر شاہی لوگوں کیلئے وبال جان ، انتظامیہ کا زمینی سطح پر کوئی نام و نشان نہیں: ساگر
سرینگر؍23، اکتوبر ؍ ؍ جموں.