ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

وادی میں تعلیمی ادارے بند کروانامعمول بن گیا

حکومت کی نااہلی اور ناکامی سے ہر ایک شعبہ بدترین بحران کی نذر/ساگر

   524 Views   |      |   Tuesday, January, 19, 2021

سرینگر// پی ڈی پی حکومت کی نااہلی اور ناکامی کی وجہ سے ریاست کا ہر شعبہ بدترین بحران کی نذر ہوگیا ہے، گذشتہ 3برسوں کے دوران یہاں کے تعلیمی شعبہ پر جو منفی اثر پڑا ہے وہ انتہائی تشویشناک ہے، حکمران اپنی نااہلی کو چھپانے کیلئے اب آئے روز تعلیمی اداروں کو بند کروا رہے ہیں جس سے نہ صرف درس و تدریس کا کام بری طرح متاثر ہورہاہے بلکہ طلباء و طالبات کے ذہنوں پر منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ موصولہ بیان کے مطابق ان باتوں کا اظہار نیشنل کانفرنس کے جنرل سکریٹری علی محمد ساگر، صوبائی صدر ناصر اسلم وانی اور شمالی زون کے صدر محمد اکبر لون نے حلقہ انتخاب امیرا کدل کے یک روزہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقعے پر پارٹی لیڈران جاوید احمد ڈار، پیر آفاق احمد، ایڈوکیٹ شوکت احمدمیر، سلمان علی ساگر، مشتاق احمد گورو اور غلام نبی بٹ بھی موجود تھے۔پارٹی لیڈران نے کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر میں اس وقت جس قدر غیر یقینیت کا ماحول ہے وہ1990ء سے بالکل بھی مختلف نہیں۔ کشمیر میں جنگ جیسا سماں ہے، ہر طرف آہ و فگان کی صورتحال ہے اور بے گناہوں کے قتل و غارت سے پوری وادی کے لوگ خوف و ہراس کے مشکل ترین دن گزار رہے ہیں۔ انہوں نے کہا وادی میں جو کچھ ہورہا ہے ، اس کے بارے میں دِلی والوں کو خواب غفلت میں نہیں رہنا چاہئے۔ نئی دلی کو یہ بات ذہن نشین کر لینی چاہئے کہ کشمیر ایک آتش فشاں پہاڑ ہے اور یہ تب تک سلگتا رہے گا جب تک نہ اسے سیاسی طور پر عوامی خواہشات کے عین مطابق حل نہیں کیا جاتا۔ پی ڈی پی وزیر اعلیٰ برائے نام ہے، سارا نظام بھاجپا اور آر ایس ایس بیرونِ ریاست سے چلا رہی ہیں، محبوبہ مفتی مودی اور امت شاہ کے اشیروار کی بیراگیوں پر ٹکی ہوئیں ہیں۔ لیڈران نے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ اب پی ڈی پی والے مسئلہ کشمیر کو سیاسی مسئلہ مانے سے بھی انکار کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ گذشتہ2سال کے اندر 276عام شہری گولیوں اور پیلٹ کی بینٹ چڑھے، ہزاروں کی تعداد میں لوگ زخمی اور اپاہج ہوئے اور یہ سلسلہ ابھی تک تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ آج بھی ہر روز کہیں نہ کہیں پیلٹ گن کا استعمال کیا جاتا ہے، چھاپے مارے جاتے ہیں، گرفتاریاں عمل میں لائیں جاتی ہیں اور لوگوں کو احتجاج کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔

متعلقہ خبریں

گزشتہ شب گلشن کلچرل فورم کشمیراور لسہ خان فدا فاؤنڈیشن نے مشترکہ طور سلسلہ قادریہ وفاضلی کے معروف صوفی بزرگ اور.

تحریر: حافظ میر ابراھیم سلفی عشرتی گھر کی محبت کا مزا بھول گئے
کھا کے لندن کی ہوا عہد وفا بھول گئے
قوم کے غم.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار
روایتی فیرن میں تبدیلی،بازاروں میں کوٹ.

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز انیڈ سپورٹس کی مجانب سے میکس ویل کالج.