ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

میژے منظور کے پہلے شعری مجموعہ’’مقصد ذات‘‘ کی رسم رونمائی

   173 Views   |      |   Thursday, January, 21, 2021

میژے منظور کے پہلے شعری مجموعہ’’مقصد ذات‘‘ کی رسم رونمائی

کتاب غزلوں اور نظموں پر مشتمل ہے، رسم رونمائی کا فریضہ مراز ادبی سنگم کے صدر ریاض انزنو نے دیاانجام
اننت ناگ //مراز ادبی سنگم کی طرف سے آج باغ نوگام اننت ناگ میں میژے منظور کے پہلے شعری مجموعہ “’’مقصد ذات” ‘‘کی رسم رونمائی انجام پذیر ہوئی ۔ کتاب کی رسم رونمائی کا فریضہ مراز ادبی سنگم کے صدر ریاض انزنو نے انجام دیا۔ کتاب غزلوں اور نظموں پر مشتمل ہے۔
تقریب کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا جس کا فریضہ مولوی جاوید احمد ڈار صاحب نے انجام دیا۔ وارثی ارشید اور وارثی عظمت نے نعتیہ کلام پیش کیا۔ اعجاز غلام محمد لالو نے کتاب پر معتدل تبصرہ پیش کیا۔ تقریب میں میژے منظور کے ادبی خدمات پر مقررین نے روشنی ڈالی۔ نشست کی صدارت ڈاکٹر محمد شفیع ایاز نے کی۔ تقریب میں نظامت کے فرائض ڈاکٹر شیدا حسین شیدا نے انجام دئے۔
تقریب کی دوسری نشست میں ایک مشاعرہ کا انعقاد ہوا جس کی صدارت اعجاز غلام محمد لالو نے کی۔ تقریب میں جنوبی کشمیر سے وابسطہ متعدد شعراء نے اپنا کلام پیش کیا جن میں قمر حمید اللہ، نادر احسن، بشیر، عبد الاحد واحد، ڈاکٹر شوکت شفا، منظور خالد، مشروع نصیب آبادی، یوسف جہانگیر، پروفیسر نثار ندیم، پرویز گلشن، راجہ مظفر، ساغر قیصر، مسعود ہاشم، حاجی رمضان، رشید صدیقی، منتظر یاسر، مظفر غزال، اظہار مبشر، مظفر دلبر، بشیر دلبر، میژے منظور، نادم شوقیہ اور ڈاکٹر شیدا حسین شیدا شامل تھے۔

متعلقہ خبریں

شیخ محمد امان زمان ونان چھی بس چھُے خدائی تنہا
کانسہ ما وُن ونکتام چھِ انسان رایہِ تنہا
کانہہ حسین دلکش دعوتھ.

شوکت بڈھ نمبل کشمیری   کیا تخلیق ہم کو انسانوں میں اور پھر مُسلماں
یہ ہم پہ کرم ہے مالک کا یہ اُن کی رفاقت ہے

اہد جمال بانڈے پوشونی سہل چھا یتھ زمانس منزٔ گذارنژیوہ زمانس ستی
کراں یتی کتھ سخنور تاپ زژٔ منزٔ آسمانس ستیٔ

خالد قمر اس گلستان چمن میں
ہوتی تھی اک فضا حسین و جمیل
رہتے تھے جس میں پادشاہ و پارسا
اور آباد تھی اک مخلوق.

نادِم شوقیہ میں اِک قبر ہوں
مجھ میں دفن ہیں
چشمِ نم کی آرزو
بےتہاشہ جستجو
کچھ منَتیں
کچھ حسرتیں