ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

پرنسپل سیکرٹری نے مستحقین سے مختلف سکیموں کے بارے میں بیداری پیدا کرنے پر.

مستحقین میں حق شہریت اسناد ،کے سی سی ، بے بی کٹس ،آلات سماعت تقسیم کئے

محض 100سے 200روپے کے عوض مہمان پرندوں کو گولیوں کا شکار بنایا جاتا ہے سرینگر/29اکتوبر/.

مشرقی لداخ میں حقیقی لائن آف کنٹرول پرصورتحال جوں کی توں، کشیدگی کے باجودخاموشی

   88 Views   |      |   Thursday, October, 29, 2020

چین اوربھارت کے درمیان فوجی سطح کی ایک اورمیٹنگ

سوموار کوصبح سے میٹنگ کے کئی ادوار،طرفین نے رکھا اپنااپناموقف پھرایکدوسرے کے سامنے

سری نگر:۲۱،ستمبر:/مشرقی لداخ میں مسلسل کئی مہینوں سے جاری سخت سرحدی کشیدگی پرقابو پانے کی جاری کوشش کے تحت سوموار کے روز بھارت اورچین کے درمیان فوجی سطح کی چھٹی اہم میٹنگ منعقد ہوئی ۔جے کے این ایس مانٹرینگ ڈیسک کے مطابق گزشتہ کچھ دنوں سے مشرقی لداخ میں صورتحال جوں کی توں بنی ہوئی ہے ،تاہم حالیہ دنوں میں کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا۔دونوں ملکوں کی افواج اپنی اپنی تحویل میں لی گئی پوزیشنوں پرڈٹی ہوئی ہیں ،لیکن یہاں کشیدگی کے باجودسکوت پایاجاتاہے ۔اس دوران سوموار کی صبح ہندوچین کے اعلیٰ فوجی کمانڈروں کے درمیان فوجی سطح کی چھٹی میٹنگ منعقد ہوئی ،جس میں فوج کی14ویں کورکے سربراہ لیفٹنٹ جنرل ہرمندرسنگھ کی سربراہی میں بھارتی فوج کاایک وفدشامل ہوا۔مشرقی لداخ میں حقیقی لائن آف کنٹرول کے چشول سیکٹر کے اُس پار چین کے علاقہ مولڈئو کے مقام پرسوموار کوصبح شروع ہونے والی اس اہم میٹنگ میں چینی فوج کی نمائندگی سائوتھ زن جیانگ ملٹری ریجن کے میجر جنرل لیولن نے کی ۔میڈیارپورٹس کے مطابق دن بھرجاری رہنے والی فوجی سطح کی اس میٹنگ میں مشرقی لداخ میں حقیقی لائن آف کنٹرول پرپائی جانے والی صورتحال کے حوالے سے تبادلہ خیال کیاگیاجبکہ سخت ترین موسم سرماشروع ہونے سے قبل حقیقی کنٹرول لائن پرتعینات کئے گئے فوجیوں کی تعدادمیں دونوں اطراف سے کمی لانے پربھی بات چیت ہوئی ہے ۔بھارت کی جانب سے میٹنگ میں شامل رہے فوج کی14ویں کورکے سربراہ لیفٹنٹ جنرل ہرمندرسنگھ نے چینی فوج کے کمانڈر پرزوردیاکہ گزشتہ مہینوں کے دوران ہوئے دوطرفہ معاہدوں کے تحت چین اپنی فوج کوواپس بلائے اورایسے علاقوں کوخالی کرے ،جن پراُس نے مئی کے بعدقبضہ کیا ہے ۔انہوں نے چینی فوج کے کمانڈر کوبتایاکہ پیپلز لبریشن آرمی کی جانب سے حقیقی لائن آف کنٹرول پر کی گئی یکطرفہ کارروائی کی وجہ سے ہی سرحدی کشیدگی پیداہوئی ہے ،اسلئے چین کوچاہئے کہ وہ سرحدی کشیدگی پرقابو پانے کیلئے پہل کرتے ہوئے قبضے میں لئے گئے علاقوں کوخالی کرنے کیساتھ ساتھ یہاں تعینات کی گئی اپنی فوج کی تعدادمیں بھی خاطرخواہ کمی لائے ۔میڈیا رپورٹس کے مطابق چین اوربھارت کی افواج کے درمیان کئی نشستوں میں ہونے والی میٹنگ شام دیرگئے تک جاری تھی ۔خیال رہے11ستمبر کوچین اور بھارت نے روس کے دارالحکومت ماسکو میں ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس میں سرحدی کشیدگی کے خاتمے پر اتفاق کیاتھا۔چین کے اسٹیٹ کونسلر وانگ ڑی اور بھارت کے وزیرِ خارجہ ایس جے شنکر کے درمیان جمعرات کو ماسکو میں ملاقات ہوئی۔اس موقع پر دونوں رہنماوں نے حالیہ سرحدی کشیدگی میں اضافے پر بات چیت کی اور کشیدگی کے خاتمے کے لیے پانچ نکات پر اتفاق کیا۔دونوں ملکوں کی جانب سے جاری کئے گئے ایک مشترکہ اعلامیے کہا گیا کہ سرحدی کشیدگی کسی کے بھی مفاد میں نہیں۔ دونوں جانب سے فوجیوں کو فوری طور پر سرحد سے ہٹایا جائے اور تناو میں کمی لائی جائے۔دونوں ملکوں کے اعلی سفارتی عہدے داروں کے درمیان یہ ملاقات ماسکو میں شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس کے موقع پر الگ سے ہوئی جس میں سرحدی کشیدگی کے خاتمے پر اتفاق کیا گیا۔چین اور بھارت کے درمیان یہ پیش رفت ایک ایسے موقع پر ہوئی ہے جب رواں ہفتے لداخ میں متنازع سرحد پر فائرنگ کے بعد دونوں ملکوں نے ایک دوسرے پر فائرنگ میں پہل کرنے کے الزامات لگائے تھے۔چین کی وزارتِ خارجہ کی جانب سے جاری کئے گئے ایک بیان میں کہا گیاتھا کہ وانگ ڑی نے اجلاس کے دوران بھارتی وزیرِ خارجہ سے کہا کہ سرحدی مداخلت اور فائرنگ جیسی اشتعال انگیزی کو فوری روکنے کی ضرورت ہے جس سے دونوں ملکوں کے درمیان معاہدوں کی خلاف ورزی ہوتی ہے۔بیان کے مطابق وانگ ڑی نے جے شنکر سے کہا کہ کشیدگی کے دوران سرحد پر لائے جانے والے تمام عسکری ساز و سامان اور سرحدی فورسز کو وہاں سے ہٹانے کی ضرورت ہے۔

متعلقہ خبریں

پرنسپل سیکرٹری نے مستحقین سے مختلف سکیموں کے بارے میں بیداری پیدا کرنے پر زوردیا
سری نگر/27؍اکتوبر/پرنسپل سیکرٹری.

مستحقین میں حق شہریت اسناد ،کے سی سی ، بے بی کٹس ،آلات سماعت تقسیم کئے
گاندربل/27؍اکتوبر//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر.

محض 100سے 200روپے کے عوض مہمان پرندوں کو گولیوں کا شکار بنایا جاتا ہے سرینگر/29اکتوبر/ وادی کشمیر کی جھیلوں اور آبی.

2016 میں گھریلواورفضائی آلودگی کی وجہ سے 15 سال سے کم عمرکے تقریباً 6 لاکھ بچوں کی موت ہوئی
سرینگر/29اکتوبر/سال.

اس قانون کی مخالفت کرنے والے اقتدار حاصل کرنے کی کوشش میں ہے ۔ جتندر سنگھ
سرینگر/29اکتوبر/بھارتیہ جنتا پارٹی.