ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

مدثر علی کو مرکزادب وثقافت کی طرف سے خراج عقیدت پیش

   128 Views   |      |   Tuesday, January, 26, 2021

مدثر علی کو مرکزادب وثقافت کی طرف سے خراج عقیدت پیش

ہے رنگ لالہ وگل نسرین چدا جدا
ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے
چرار شریف// عنایت گل// ہر آنکھ پر نم ہر زبان خاموش یوں تو موت کا کلنڈر مقرر ہے کون کب آئے اور کب چھو ڑ کر چلا جاے گا یہ تو انسانی دخل سے بہت دور ہے لیکن خالق انسان نے جب انسان کو تخلیق کیا تو یہ کلنڈر بھی بغل میں رکھا ہے کہ مجھے کب تک آپ کی ضرورت ہے اور کب کس وقت اور کہاں کس حالت میں سپرد خاک ہو نا ہے ۔رزق اور موت انسان کی بس کی بات نہیں ہے۔مولانا روم نے ایک جگہ لکھا ہےدی شیخ با چراغ ہمی گشت گرد شہرجانم ملول کز دیوم انسانم آرزو استبالکل میرا دل پر ملول ہے مجھے انسانوں کی ضرورت ہے بہت خوب دنیا میں لاکھوں کروڑوں انسان جنم لیتے ہیں مگر حسرت ان غنچوں پر ہیں جو بن کھلے مرجا جاتے ہیںایسا ہی ایک خوبصورت اور خو شبو دار غنچہ مد ثر علی بن کھلے مر جھا گیا۔ انکے جوان مرگ ہونے سے صحافت کی دنیا میں ایک خلا پیدا ہوا چرار شریف کی سر زمین سے با لکل در بار شیخ العالم کا ایک مرید ایک ریشی گھرانے سے تعلق رکھنے والا یہ ہونہار قلم کار ایک معروف صوفی بزرگ غلام احمد دلبر صاحب کا پوتا اور محمد یاسین مدہوش کا قریبی رشتہ دار تھا مدثر ایک حقیقت پسندانہ صحافی تھا حق کا ساتھ دیتا تھا واقعی کشمیر کے ایک مایہ ناز انگریزی اخبار گریٹر کشمیر کے ایڈیٹر تھے اور حق تو یہ ہے کہ فیاض کلو صاحب اس اخبار کے سرپرست ہیں اور بجا طور انکے ساتھ کام کرنا ایک کادار والا معاملہ ہے لیکن مدثر علی ہمہ وقت محنت مطالعہ اور صداقت سے اپنے قلم کو جنبش بخشتے تھے لکھنے کا انداز منفرد اور تاریخی اہمیت کا قایل بھی تھا میری ان سے اکثر ملاقات گاڑی میں ہوا کرتا تھی ادبی معاملات پر صحافت پر مجھے خوشی محسوس ہوتی تھی کہ یہ جوان خوش اسلوبی سے پیش آتا تھا اور اپنے علاقے کے بارے میں بھی حساس ہوتا تھا مگر اللہ کو کچھ اور ہی منظور تھا اور شاید کشمیر کی بدنصیبی بھی قلم تو ہر ایک کے ہاتھ میں ہوتا ہے مگر قلم کا خاموش ہونا اور وہ قلم جو سچائی ایمانداری اور دیانتداری کا متلاشی ہو اس کا غم تو ہر حال میں کریدتا رہے گا آسمان پر تو تاروں کا بن ہے مگر اک تارہ ٹوٹ گیا تو قیامت بپا ہوئی۔ کشمیر مرکزادب وثقافت کی طرف سے مدثر علی کو زبردست خر اج عقیدتپیش کیا گیا پروفیسر محمد زمان آزردہ صاحب کی صدارت میں ایک اجلاس طلب کیا گیا اور مرحوم کے ایثال ثواب کے لے دعا مانگی گی۔ علی احسن۔ وارثی بشیر۔ مشتاق محرم۔ یونس وحید۔ جی این ادفر۔ غلام رسول صدور۔ اور باقی دوستوں نے پرنم آنکھوں سے تعزیت کی اللہ انکے لواجقین کو صبر جمیل عطا کرے۔

متعلقہ خبریں

تحریر: رشید پروین ؔسوپور سلسلہ روزو شب نقش گر حادثات
سلسلہ روزو شب اصل حیات و ممات
سلسلہ روزو شب تارِ حریر.

بہ گلشن بدرنی چھس پننہ تہ پننہ انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکین تمام ارکانن ہندہ طرفہ کشیر ہندین سرکردہ تہ نمایندہ.

گزشتہ شب گلشن کلچرل فورم کشمیراور لسہ خان فدا فاؤنڈیشن نے مشترکہ طور سلسلہ قادریہ وفاضلی کے معروف صوفی بزرگ اور.

تحریر: حافظ میر ابراھیم سلفی عشرتی گھر کی محبت کا مزا بھول گئے
کھا کے لندن کی ہوا عہد وفا بھول گئے
قوم کے غم.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.