ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

ماضی کے فرضی انکائونٹروں سے سبق حاصل کیوں نہیں کیا گیا؟

   224 Views   |      |   Saturday, January, 16, 2021

ملوثین کو عملی طور پر سزا دی جائے،مارے گئے نوجوانوں کی لاشیں لواحقین کے سپرد کرنا لازمی: عمر عبداللہ

سرینگر؍25،ستمبر ؍ نیشنل کانفرنس کے نائب صدر اور جموں کے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ شوپیان فرضی تصادم میں 3معصوم اور بے گناہ نوجوانوں کو جنگجو جتلا کر موت کے گھاٹ اُتارنے کے حقائق سامنے آنے پر اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ مژھل، پتھری بل اور دیگر فرضی انکائونٹروں سے آج تک سبق حاصل کیوں نہیں کیا گیا؟ ایسے گھنائونے اقدامات عوامی اعتماد اور بھروسہ تہس نہس کردیتے ہیں اور لوگوں کو سسٹم(نظام) سے الگ تھلگ کردیتے ہیں۔ کے این ایس کو موصولہ بیان کے مطابق انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر پولیس نے اس بات کی تصدیق کی ہے جس کا دعویٰ شوپیان میں فرضی انکائونٹر کے دوران مارے گئے 3معصوم نوجوانوں کے اہل خانہ کررہے تھے۔عمر عبداللہ نے انکائونٹر کے روز اس بات کا دعویٰ کیا گیا تھا کہ تصادم آرائی کی جگہ سے بھاری مقدار میں اسلحہ و گولہ بارود اور مواد برآمد کیا گیا۔ یہاں یہ سوال جنم لیتا ہے کہ یہ مواد وہاں کس نے رکھا تھا ؟این سی نائب صدر نے کہا کہ ان بدنصیب نوجوانوں کو شمالی کشمیر میں کہیں دفن کیا گیا ہے۔ یہ بات لازمی ہے کہ قبرکشائی کرکے ان کی لاشوں کو نکال کر فوری طور پر اہل خانہ کے حوالے کیا جائے تاکہ وہ اپنے لخت جگروں کو آبائی علاقے میں اپنے گھروں کے قریب تدفین کرسکے۔انہوں نے کہا کہ فوج نے بھی اپنی تحقیقات رپورٹ میں اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ فوجیوں نے امشی پورہ انکائونٹر کے دوران خصوصی اختیارات سے تجاوز کیا ہے ۔ انہوں نے اُمید ظاہر کی کہ خاطیوں کو عملی طور پر سزا دی جائیگی اور ماضی میں ایسے واقعات میں ملوث فوجیوں کو سزا نہ دینے کی ریت کو نہیں دہرایا جائیگا۔

متعلقہ خبریں

تحریر: رشید پروین ؔسوپور سلسلہ روزو شب نقش گر حادثات
سلسلہ روزو شب اصل حیات و ممات
سلسلہ روزو شب تارِ حریر.

بہ گلشن بدرنی چھس پننہ تہ پننہ انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکین تمام ارکانن ہندہ طرفہ کشیر ہندین سرکردہ تہ نمایندہ.

گزشتہ شب گلشن کلچرل فورم کشمیراور لسہ خان فدا فاؤنڈیشن نے مشترکہ طور سلسلہ قادریہ وفاضلی کے معروف صوفی بزرگ اور.

تحریر: حافظ میر ابراھیم سلفی عشرتی گھر کی محبت کا مزا بھول گئے
کھا کے لندن کی ہوا عہد وفا بھول گئے
قوم کے غم.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.