ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

افسر شاہی لوگوں کیلئے وبال جان ، انتظامیہ کا زمینی سطح پر کوئی نام و نشان.

بھاجپا آئین ہند کو پارٹی منشور سے بدلنا چاہتی ہے ،مسئلہ کشمیر کے لئے نوجوانوں.

ڈویژنل کووڈ کنٹرول روم کشمیر کو وباء کی موثر روکتھام کیلئے سراہا
سرینگر.

جموں وکشمیر میں’ نار ملسی اور ترقی ‘ کا ایک نیا دور شروع ہوا

   87 Views   |      |   Friday, October, 23, 2020

’مرکز نے ایک یا دو نہیں 50تاریخی فیصلے لئے‘
لوگوں تک پہنچنے کیلئے بات چیت کا عمل عنقریب شروع ہوگا،یہاں جمہوریت مفاد پرست ہاتھوں متاثر ہوئی :لیفٹیننٹ گورنر

سرینگر؍15 ،اگست ؍ ؍ جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گور نر منوج سنہا نے سنیچر کے روزکہا ہے کہ جموں وکشمیر میں ’نار ملسی اور ترقی ‘ کا ایک نیا دور شروع ہوا ۔یوم آزادی کی مرکزی تقریب سے قریب آدھے گھنٹے تک خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کے عوام تک پہنچنے کیلئے بہت جلد بات چیت کا عمل بھی شروع کیا جائیگا ۔کشمیر نیوز سروس کے مطابق شیر کشمیر کرکٹ اسٹیڈیم سونہ وار سرینگر میں منعقدہ74ویں یوم آزادی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے لیفٹیننٹ گو رنر منوج سنہا نے کہا کہ جموں وکشمیر میں گزشتہ ایک سال کے دوران ’نار ملسی اور ترقی ‘ کا ایک نیا سفر اور نئے دور کا آغاز ہوگیا ہے ۔ انہوں نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ ایسی سرگرمی میں شامل ہوجائیں ، جس سے قوم کو ترقی کرنے میں مدد ملے۔منوج سنہا نے زور دے کر کہا کہ حکومت جموں وکشمیر کے عوام کے لئے ترقی ، فلاح و بہبود اور معاشرتی تبدیلی پانے کا ایک بہتر متبادل فراہم کرنے کے لئے پرعزم ہے۔ان کا کہناتھا ’سال2019میں آئینی تبدیلی نافذ کرنے کے بعد ، مرکزی حکومت نے خطے کا چہرہ بدلنے کے لئے ایک یا دو نہیں ، بلکہ 50تاریخی فیصلے کیے۔لیفٹیننٹ گور نر نے کہا کہ گزشتہ ایک سال میں آنے والی تبدیلیوں کی وجہ سے’نارملسی اور ترقی‘ کا ایک نیا دور شروع ہوا ہے۔لیفٹیننٹ گور نر نے پچھلے سال اگست میں دفعہ370 اور آرٹیکل 35(اے) کو منسوخ کرنے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ایک نیا سفر شروع کیا گیا ہے۔7اگست کو اپنے عہدے کی ذمہ دارایاں سنبھالنے والے جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گور نر منوج سنہا نے کہا کہ نوجوانوں اور طلباء کی زندگی کومثبت سرگرمیوں کے ذریعہ سے تبدیل کیا جائیگا جبکہ نوجوانوں کی طاقت ہر طرح کی تبدیلیوں کی آماجگاہ رہی ہے۔لیفٹیننٹ گور نر نے نوجوانوں کو مستقبل کا لیڈر قرار دیتے ہوئے کہا کہ نوجوانوں کی طاقت کو قوم کی ترقی کیلئے استعمال کیا جائیگا ۔انہوں نے نوجوانوں سے براہ راست مخاطب ہو کر کہا ’یہ ملک آپ کا ہے اور آپ ہی اس ملک کے مستقبل کے رہنما ہیں ‘۔انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کے نوجوانوں کیلئے نئے مواقعے پیدا کئے جائیں گے ۔آدھے گھنٹے کی تقریر کے دوران جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گور نر منوج سنہا نے کہا ’حکومت کے پاس 5 اہم رہنما اصول ہیں۔ ایک منصفانہ اور شفاف نظام حکمرانی کو قائم کرنا ، نچلی سطح کی ترقی کی منازل طے کرنا ، سرکاری فلاحی منصوبوں کی زیادہ سے زیادہ حد تک رسائی ، معاشی ترقی اور روزگار کے مواقعے پیدا کرنا ہے۔منوج سنہا نے کہا کہ آزادی کے بعد بد قسمتی سے کچگ ’غلط فیصلے ‘ لئے گئے جس کی وجہ سے جموں و کشمیر کے عوام کے دلوں میں ناراضگی پھیل گئی اور انہیں باقی لوگوں سے دور کردیا۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں آہستہ آہستہ مساوات اور انصاف کو بحال کیا جارہا ہے۔منوج سنہا نے کہا کہ ان کی انتظامیہ جموں و کشمیر میں جمہوریت کو مستحکم کرنے کے لئے پرعزم ہے جبکہ انتظامیہ اُنکے ساتھ کھڑی ہے ،جو جمہوریت کو مضبوط کرنے کیلئے پر عزم ہیں ۔ان کا کہناتھا کہ جن مقامی عوامی نمائندوں کو خطرہ لاحق ہے ،کو25لاکھ روپے زندگی کا بیمہ فراہم کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پولیسنگ کو مزید موثر بنانے کے لئے ضروری اصلاحات کی جارہی ہیں۔ انہوں نے یہ ریمارکس ،حالیہ دنوں سیاسی کارکنوں پر ہوئے حملوں کے پس منظر میں دیئے۔ ان کا کہناتھا’ہم جموں و کشمیر کے عوام کے لئے ایک بہتر متبادل کی فراہمی کے لئے پرعزم ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایک متبادل جس میں ترقی ، فلاح و بہبود اور معاشرتی تبدیل ہیاور اس مقصد کیلئے لوگوں تک پہنچنے کیلئے بات کا چیت کا سلسلہ بھی عنقریب شروع کیا جائیگا ۔انہوں نے کہا ’ ہم جموں و کشمیر سے متعلق بیانیہ بدل کر ایک ایسا بیانیہ تشکیل دینا چاہتے ہیں جس کی بنیاد امن، ترقی اور سماجی مساوات پر ہو‘۔ان کا کہناتھا یہ انتہائی افسوس کی بات ہے کہ ثقافتی ہم آہنگی کی وراثت کو فرقہ واریت کی شیطانی کہانی نے کھڑا کردیا ہے لیکن ، ہم اس بیانیہ کو ایک بار پھر تبدیل کرنا چاہتے ہیں‘۔منوج سنہا نے کہا کہ ہم ترقی ، امن ، خوشحالی اور معاشرتی ہم آہنگی کو جموں و کشمیر کے بیانیہ کا سب سے لازمی حصہ بنانا چاہتے ہیں۔سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی کے نظریہ’انسانیت ، جموریت اور کشمیریت‘ کا حوالہ دیتے ہوئے لیفٹیننٹ گور نر منوج سنہا نے افسوس مقام یہ ہے کہ انسانیت نے کشمیر میں کئی دہائیوں تک دہشت گردی کی شکست قبول کی ، جمہوریت مفاد پرست ہاتھوں متاثر ہوئی اور اس سے پیدا ہونے والی نفرت کو ختم کرنے کے لئے کشمیریت کا قتل عام کیا گیا۔لیفٹیننٹ گور نر نے کہا کہ جموں و کشمیر سے باہر شادی کرنے والی کشمیری خواتین کے حقوق اب محفوظ ہیں۔ان کا کہناتھا ’مغربی پاکستان سے آنے والے مہاجرین ، بے گھر ہوئے مہاجرین ، پہاڑی بولنے والے لوگ ، دیگر پسماندہ طبقات اور صفائی کرمچاریوں کو بالآخر طویل عرصے کے بعد انصاف ملا ہے، اب وہ جمہوری ، روزگار اور جائیداد کے حقوق کے مالک ہیں‘۔انہوں نے کہا’تعلیم اور روزگار کے شعبوں میں اب غیر جانبدارانہ مخصوص پالیسی رکھی جارہی ہے‘۔ان کا کہناتھا کہ جموں وکشمیر میں آئین کی 73 ویں اور74 ویں ترامیم کا مکمل اطلاق سے مضبوط نچلی جمہوریت کی بنیاد رکھی ہے۔ان کا کہناتھا کہ پنچایتوں اور بلدیات کو فروغ دینے سے اہم اور جوابدہ نچلی سطح کی جمہوریت کی بنیاد رکھی ہے۔ انہوں نے کہا ’ ترقی کو یقینی بنانے کے لئے 960 کونسلرز نیز27ہزار سے زائد سرپنچوں اور پنچوں کے ذریعہ زمینی سطح پر بے مثال توانائی کو متحرک کیا جارہا ہے۔انہوں نے جموں وکشمیر پولیس ، مرکزی نیم فوجی دستوں اور فوج کے جوانوں کے رول کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے(فورسز) قوم کی سالمیت اور آزادی کو یقینی بنانے کے لئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا اور اس بات کو یقینی بنایا کہ ملک کے شہری ایک محفوظ اور پر امن زندگی گزاریں۔منوج سنہا نے کہا کہ حکومت کا مقصد جموں وکشمیر میں انتہائی جدید اور عالمی معیار کا بنیادی ڈھانچہ تشکیل دینا ہے۔انہوں نے کہا ،’ہمیں جموں و کشمیر کو عالمی سطح کی سیاحتی مقام میں تبدیل کرنا ہے، ہمیں یہاں پرامن ماحول قائم کرنا ہے، مجھے یہاں کے لوگوں کے مکمل تعاون اورحمایت کی توقع ہے تا کہ ہم ایک نیا جموں و کشمیر تشکیل دے سکیں‘۔منوج سنہا نے کہا کہ یہ سردار پٹیل کا خواب تھا کہ پورے ہندوستان کو صرف ایک سیاسی نقشہ کے طور پر موجود نہیں ہونا چاہئے بلکہ ساتھ ہی ساتھ آگے بڑھنا چاہئے اور ترقی اور خوشحالی کے نئے سنگ میل طے کرنا چاہئے۔

متعلقہ خبریں

افسر شاہی لوگوں کیلئے وبال جان ، انتظامیہ کا زمینی سطح پر کوئی نام و نشان نہیں: ساگر
سرینگر؍23، اکتوبر ؍ ؍ جموں.

بھاجپا آئین ہند کو پارٹی منشور سے بدلنا چاہتی ہے ،مسئلہ کشمیر کے لئے نوجوانوں نے بہت قر بانیاں دیں ،اب لیڈران کی.

ڈویژنل کووڈ کنٹرول روم کشمیر کو وباء کی موثر روکتھام کیلئے سراہا
سرینگر 23 اکتوبر//فائنانشل کمشنر صحت و طبی تعلیم.

جموں /23؍اکتوبر//الیکشن اَتھارٹی جموں وکشمیر پنچایتی راج ایکٹ 1989 کے مطابق ہر ضلع ترقیاتی کونسل حلقے کے لئے انتخابی.

دیہی ترقیاتی سیکٹر میں متعدد ترقیاتی کاموں کا معائینہ کیا
متعدد عوامی وَفود سے ملے
بارہمولہ /23؍اکتوبر //آئندہ.