ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

بھارت پاکستان کشمیرکے سلسلے میں قراردادوں کوہٹانے میں کامیاب نہیں ہوسکتے /ایم ایم انصاری

   178 Views   |      |   Saturday, January, 23, 2021

سلامتی کونسل کے ایجنڈے سے کشمیرکے مسئلے کو ہٹادیاجائے/ بھارت

رینگر /02ستمبر/موجودہ صورتحال کومد نظر رکھتے ہوئے سلامتی کونسل سے کشمیرکی قراردادیں ختم کرنا مشکل ہی نہیں ناممکن کاعندیہ دیتے ہوئے سابق مذاکرتکار نے کہاکہ 70کی دہائی میں جب بنگلہ دیش کا قیام عمل میں آ یاتھاتب ایسا ممکن تھا تاہم اب سلامتی کونسل سے قراردادوں کو ختم کرنااقوام متحدہ کے لئے بھی نا ممکن ہے ۔اے پی آئی کے مطابق بھارت کی جانب سے اقوام متحدہ کوتحریری اور تقریری طورپراس بات سے آگاہ کیاگیا کہ جموںو کشمیر کے حوالے سے پاس کی گئی قراردادوں کواب ختم کیاجاناچاہئے اور سلامتی کونسل کاجومسئلہ ایجنڈے پرہے ا سے قلعدم کیاجاناچاہئے بھار ت کے مستقل رکن نے دلیل دیتے ہوئے کہاکہ وقت بہت آگے چلاگیاہے حالات وواقعات بدل گئے ہے اقوام متحدہ کی اب جموں وکشمیرکے حوالے سے مداخلت بھی بے معنی اور ناممکن ہے لہذہ سلامتی کونسل کے ایجنڈے سے کشمیرکے مسئلے کو ختم کیاجاناچاہئے بھار ت کے اس مطالبے پر سابق مذاکرتکار ایم ایم انصاری نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ سلامتی کونسل سے کشمیرکامسئلہ ختم کرنا اب بھار ت پاکستان کے بس کی بات نہیں ہے انہوںنے کہاکہ مسئلے کے صرف دو ہی فریق نہیں ہے بلکہ کشمیرمسئلے کے کئی فریق جن کی بھارت پاکستان جموںو کشمیرکے لوگ اور چین بھی ایک فریق بنتا جارہاہے جس کے پاس جموں وکشمیرکی اراضی کاایک بہت بڑاحصہ ہے سابق مذاکرات کار نے کہاکہ بھارت پاکستان نے اگرچہ کشمیرکے مسئلے کو دوطرفہ بات چیت کے ذریعے حل کرنے کاکئی بار اعادہ کیاہے اور دونوں ممالک کے مابین شملہ ایگریمنٹ ،لاہوراعلانیہ، تاشکند آگرہ سمیت شیخ الحرم بات چیت کے دوران کشمیرکے مسئلے کوحل کرنے کاعادہ کیاگیاہے تاہم دونوں ممالک نے پچھلے سات دہایئوںسے اس مسیلے کو حل کرنے کے بجائے اس سے مزیدپیچیدہ بنادیا ۔سابق مذاکرت کا رنے کہا کہ 70کی دہائی میں جب بنگلہ دیش کاوجود عمل میںآیاتب اگر بھارت پاکستان سلامتی کونسل سے کشمیرکے مسئلے کوختم کرنے پراتفاق کرتے تو ایساممکن تھاتاہم اب ایسا کرنا دونوں ممالک کے لئے مشکل ہی نہیںبلکہ ناممکن ہے ۔انہوںنے کہا کہ جموں وکشمیر کامسئلہ حل کرنا اگر چہ بھارت پاکستان کی ذمہ دارری ہے تاہم اقوام متحدہ کو یہ اختیار خود بھارت پاکستان نے دیاہے اور پچھلے چھ دہائیوں سے اقوام متحدہ کے ایجنڈے پرجموںو کشمیرکے حوالے سے کئی قراردادیں موجود ہے جن کوواپس لینا خود اقوام متحدہ کے اختیار میں نہیں ۔

متعلقہ خبریں

تحریر: رشید پروین ؔسوپور سلسلہ روزو شب نقش گر حادثات
سلسلہ روزو شب اصل حیات و ممات
سلسلہ روزو شب تارِ حریر.

بہ گلشن بدرنی چھس پننہ تہ پننہ انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکین تمام ارکانن ہندہ طرفہ کشیر ہندین سرکردہ تہ نمایندہ.

گزشتہ شب گلشن کلچرل فورم کشمیراور لسہ خان فدا فاؤنڈیشن نے مشترکہ طور سلسلہ قادریہ وفاضلی کے معروف صوفی بزرگ اور.

تحریر: حافظ میر ابراھیم سلفی عشرتی گھر کی محبت کا مزا بھول گئے
کھا کے لندن کی ہوا عہد وفا بھول گئے
قوم کے غم.

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی نشست بزم فریاد منعقد ہوئ۔ کئ مہینوں کے.