ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

کورونا پہلے سے زیادہ سنگین ، کئی ممالک میں لاک ڈاون کا نفاذ     سرینگر//.

ڈاکٹرفاروق عبداللہ سمیت دوسرے بیماروں کی جلدصحتیابی کے لئے خصوصی دعا کی.

ہائی اسکول لاجورہ پلوامہ کے 14طلباء نے ڈسٹنکشنز حاصل کیں پلوامہ/تنہا ایاز/.

باغ گلہ لالہ میں امسال 1.5ملین پھول کھلنے کی امید

   14 Views   |      |   Thursday, April, 15, 2021

باغ گلہ لالہ میں امسال 1.5ملین پھول کھلنے کی امید

مارچ کے آخر تک گُل پوری طرح سے کھلیں گے جس کا نظارہ ہزاروں مقامی و غیر مقامی کرسکیں گے

سرینگر/جموں کشمیر کی گرمائی راجدھانی سرینگر میں سیاحوں کی تفریح کے مرکز شہرہ آفاق ڈل جھیل کے کناروں اور دلکش زبرون پہاڑی سلسلے کے دامن میں واقع ایشیا کے سب سے بڑے ٹیولپ گارڈن (باغ گل لالہ)ممکنہ طور پرسیاحوں اور عام لوگوں کے لئے کھول دیا جائے گا۔ جس میں مختلف نوعیت کے رنگا رنگ پروگرام منعقد ہوں گے۔ جبکہ رواں برس باغ گلہ لالہ کو جدید ترین سہولیات سے لیس کیا جارہا ہے ۔ باغ میں روشنی کے انتظام کیلئے جدید لائٹیں نصب کی گئیں ہیں جبکہ سیاحوں کیلئے دیگر اقسام کی سہولیات بھی بہم رکھی جارہی ہے ۔زبرون پہاڑیوں کے دامن میں قائم ایشاء کے سب سے بڑے باغ گلہ لالہ میں امسال ماہ مارچ کے آخر تک 1.5ملین گُل کھلنے کی امید ہے ۔ باغ گل لالہ میں کھلے طرح کے طرح رنگوں کے ٹولپ سے مقامی اور غیر مقامی سیاحوں کی بڑی تعداد لطف اندوز ہوگی ۔ ٹولپ عمومی طور پر چار ہفتوں تک رہتے ہیں لیکن باغبانوں اور دیگر عملہ کی کاوشوں سے رواں برس ٹولپ اور زیادہ وقت تک زندہ رہ سکتے ہیں۔ ایشاء کے اس سب سے بڑے گل لالہ میں کھلے پھولوں کی عمر اگرچہ محض چند ہفتوںکی ہوتی ہے لیکن ان ٹولپوں کے اُگانے کا کام سال بھر چلا رہتا ہے جس میں قریب 120باغبان ، مزدور اور دیگر عملہ کی محنت اور لگن و خون پسینہ لگتا ہے اور باغبانی کا عمل پورے سال چلتا ہے تب ہی جاکر اتنی بڑی تعداد میں باغ میں پھول کھلتے ہیں اور سیاح اور سرکاری داد تحسین پیش کرنے پر مجبور ہوجاتی ہے ۔ گزشتہ برس اس باغ میں قریب 13لاکھ پھول کھلے تھے تاہم کووڈ 19کے نتیجے میں نافذ لاک ڈاون کی وجہ سے یہ پھول ایسے ہی مرجھاگئے لیکن اس برس محکمہ کی کاوشوں اور باغبانوں کی محنت سے اس میں دو لاکھ پھولوں کا مزید اضافہ کیا گیا ۔ اس سال اس بلوم کے توقع کی جارہی ہے مارچ کے آخری ہفتے میں ہوتا ہے کیونکہ درجہ حرارت سے حساس پھولوں کو پارہ میں 15 ڈگری سے زیادہ رہنے کے لئے پارا کی ضرورت ہوتی ہے۔ ‘‘باغ کا افتتاح موسم پر منحصر ہے۔ فروری میں مارچ میں درجہ حرارت معمول سے کم ہو گیا ہے۔ 07 مارچ سے بارش کی بھی پیش گوئی کی جارہی ہے۔ اسلئے باغ 20 مارچ سے پہلے نہیں کھل سکے گا ،محکمہ فلوریکلچر کے انچارج ڈپٹی ڈائریکٹر شایق رسول نے کہاکہ ایک ٹیولپ پھول کی اوسط زندگی 20 دن ہوتی ہے اور زیادہ سے زیادہ 25 تک پھیلی جاسکتی ہے جس کی مدد سے مجموعی طور پر بلوم میں دیر سے کھلنے والی مختلف قسم کے ٹولپس شامل کرکے بڑھایا جاتا ہے۔ اپریل کے آخر میں پھول گرنا شروع ہوجاتے ہیں۔ ٹیولپ گارڈن میں پچھلے پانچ سالوں سے باغبانی کی حیثیت سے کام کرنے والے 55 سالہ عبد الرحمن نے بتایا ،کھلنے کے دوران ، کام دوگنا ہوجاتا ہے کیونکہ ہمیں پھولوں کی دیکھ بھال کے ساتھ ساتھ پرجوش سیاحوںسے بھی نمٹنا پڑتا ہے۔انہوں نے کہا کہ انہیں پودوں کا مشاہدہ کرنا ہوگا کیوں کہ مئی اور 15 جون تک ٹولپ بلبوں کے پودوے سوکھ جاتے ہیںانہوں نے کہا کہ گرمی اپنے عروج پر ہونے پر سخت کام جولائی کے آغاز سے ہی شروع ہوتا ہے۔ رحمان نے کہا ، “جولائی ، اگست اور ستمبر میں ، ہمیں پودے کو بڑی احتیاط کے ساتھ مناسب احتیاط کے ساتھ ہٹانا ہوگا تاکہ انہیں مناسب درجہ بندی کے ساتھ کولڈ اسٹورز میں رکھا جائے۔انہوں نے کہا کہ یہ چند سو یا ہزار پودے نہیں بلکہ ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ ہیں۔ سرد شیڈوں میں درجہ حرارت تقریبا 15 سے 18 ڈگری برقرار رہے۔عہدیداروں کو ہر سال زیادہ ٹیولپ بلب درآمد کرنا پڑتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ نکالنے کے عمل کے دوران اور اس کے بعد 30 فیصد کے قریب بلب خراب یا بیمار ہو جاتے ہیں اور انہیں نئے بلب لگانا پڑتے ہیں۔ ہر سال ہالینڈ سے بلب درآمد کرتے ہیں۔ اس سال ہم نے 4.6 لاکھ ٹیولپ بلب خریدے۔ ہالینڈ سے جو دنیا کا سب سے بڑا پھول بلب منڈی ہے۔ صوفی نے کہا۔ ایک ٹیولپ بلب کی قیمت 12 اور 24 کے درمیان کہیں بھی ہوسکتی ہے۔اس کی شرح بین الاقوامی منڈی کی حالت پر منحصر ہے جو یورو کے نرخوں پر کام کرتی ہے۔ باغ جو ایشیاء کا سب سے بڑا ٹیولپ باغ ہے اور یہ زبروان رینج کے دامن اور شاہی دال جھیل کے کنارے پر واقع ہے میں 63سے زیادہ اقسام کی سرخ ، پیلے ، گلابی ، سفید ، جامنی ، نیلے ، پیلے اور کثیر رنگ کے پھول ہیں۔معمول کے علاوہ ، ہمارے پاس کرمسن اور اینٹوں کا سرخ ، مرون اور خوبانی رنگ بھی ہے۔ ابتدائی اور دیر سے پھولنے والی مختلف اقسام کو کْھلنے کی پوری مدت میں توسیع کرنے کے لئے شامل کیا گیا ہے ، انہوں نے کہاٹیولپس کے علاوہ اس باغ میں ہائیسنتھس ، ڈافوڈلز اور بہار کے پھول والے جھاڑی بھی ہیں ہمارے پاس خوبانی اور بادام جیسے درخت بھی ہیں یہ باغ کی خوبصورتی کو بڑھانے کے لئے کیا گیا ہے باغ کو 36 پلاٹوں میں تقسیم کیا گیا ہے جس میں ہر پلاٹ میں 16-18 بیڈ ہیں۔ باغ کے اندر بھی تین پارکس موجود ہیں جہاں سیلانی پہاڑوں کا غلبہ ہونے والے لوگ رنگوں کے سمندر میں بیٹھ کر خود کو دیکھ سکتے ہیں۔ ٹیولپ ٹری سمیت متعدد چھوٹے سجاوٹی درخت باغ کے متعدد راستوں کے اطراف کو سجاتے ہیں۔ اکتوبر میں ، ٹریکٹر استعمال کرکے مٹی کی تیاری کی جاتی ہے۔ اس عرصے کے دوران پانی کی نکاسی کے ساتھ ساتھ خوبصورتی کے لئے بھی مناسب چینلز کے ساتھ تیار کی جاتی ہیں۔ ‘‘15 نومبر تک ، ٹیولپ بلبوں کی بوائی شروع ہوگئی۔ ایک اور باغی محمد ایوب لون ، جو پچھلے 16 سالوں سے یہاں آرہا ہے ، اس میں قریب قریب ایک مہینہ لگتا ہے۔ 20 فروری تک جب برف پہلے ہی پگھل چکی ہے ، ہم مٹی کو ڈھیلنا شروع کردیتے ہیں اور ناپسندیدہ گھاس کو ہٹا دیتے ہیں اسپرے ایف کے طور پر کیا جاتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر کا ٹیولپس سے تعلق اس کی ابتدا سینکڑوں سالوں پہلے ہوئی تھی جب گھروں کی مٹی کی چھتوں پر یہ پھول اُگتے تھے آہستہ آہستہ ان پھولوں کو باغوں میں سجانے کا کام شروع کیا گیا اور سال 2005-06میں اس وقت کی ریاستی حکومت نے فیصلہ کیا تھا کہ وہ سراج باغ کو کشمیر کے تاریخی تعلقات کو ٹیولپس کے ساتھ رکھتے ہوئے ریگل ٹولپ گارڈن میں تبدیل کرے گا۔اور سال 2007میں اس کیلئے باضابطہ کام شروع کیا گیا ۔ اس باغ کی وجہ سے ٹولپ سیزن میں لاکھوں سیلانی کشمیر وار د ہوتے ہیں جس سے یہاں کی سیاحت میں چار چاند لگ جاتے ہیں اور ہوٹل ، ہاوس بوٹ اور دیگر شعبہ کے تاجروں کو فائدہ ہوتا ہے ۔

متعلقہ خبریں

ڈاکٹرفاروق عبداللہ سمیت دوسرے بیماروں کی جلدصحتیابی کے لئے خصوصی دعا کی گئی   سرینگر// کرونا وائرس کی وبائی بیماری.

کہا ہندوستان کے بہادرکنبے کے اَفراد حب الوطنی اور قربانی کی زندہ مثال ہیں   سری نگر// لیفٹیننٹ گورنرمنوج سنہا.

سبزار احمد بٹ ۔۔۔اویل نورآباد شہر کا تبدیل ہونا شاد رہنا اور اداس
رونقیں جتنی یہاں ہیں عورتوں کے دم سے ہیں

تحریر : ڈاکٹر نذیر مشتاق بچوں اور والدین کی سوچ اوربرتائو میں موجود خلیج سے پیدا ہونے والے Child depression کے مسئلے سے.

تحریر: عابد حسین راتھر جب سے کائنات وجود میں آئی ہے اور انسان اس کائنات میں ارتقاء پذیر ہوا تب سے بہت سارے اقوام.