ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

آج یہاں سنور کلی پورہ ماگام میں گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے ایک ادبی.

جدید دور میں گرمی دینے والے آلات کے باوجود بھی کانگڑی کی اہمیت برقرار

آٹھ زونوں سے لڑکوں اور لڑکیوں نے حصہ لیا
پلوامہ/ تنہا ایاز /
یوتھ سروسز.

اُمیدِ مہاجر

   8 Views   |      |   Sunday, January, 24, 2021

افسانہ۔۔آخ

پرویز مانوس

کشمیر سے آنے والے بتا
احوال وہاں کے کیسے ہیں ؟
جنت کی ہوائیں لوٹی ہیں
یا آج بھی دوزخ جیسا ہے؟
بیٹھا ہے مہاجر دُور بہت
اک مُدت سے یہ آس لئے
حالات وہاں کے جان سکے
تم آئے ہو بتلا ؤ ذرا ۔۔۔؟
کیا اب بھی وہاں حق کی باتیں
بے خوف کوئی کر پاتا ہے
کیا اب بھی وہاں کی سڑکوں پر
بے موت کوئی مر جاتا ہے
کیا اب بھی وہاں کے کھیتوں میں
بارود کی فصلیں اُگتی ہیں
کیا اب بھی وہاں کی ہر مسجد
نعروں سے گونجا کرتی ہے
کیا اب بھی وہاں پر فائرنگ کی
گن گرج سُنائی دیتی ہے
کیا اب بھی وہاں ویرانے میں
مصنوعی تصادم ہوتا ہے
کیا اب بھی وہاں کی بستی سے
گھر جلنے کی بُو آتی ہے
کیا اب بھی وہاں پہ راتوں کو
معصوم سے بچے ڈرتے ہیں
کیا اب بھی حوّا کی بیٹی
سہمی سہمی سی رہتی ہے
کیا اب بھی وہاں کوئی پنڈت
بے خوف رہائش رکھتا ہے
کیا اب بھی وہاں کے مندر میں
شنکر کی پوجا ہوتی ہے
کیا اب بھی وہاں ڈل کے باسی
حالات کا رونا رو رو کر
بچوں کو بھوک کھلاتے ہیں
اور گُھٹ گُھٹ کر سو جاتے ہیں
کیا اب بھی وہاں کے باغو ں کی
کلیوں کو مسلا جاتا ہے
کیا اب بھی وہاں پر بہنوں سے
عصمت کی چادر چھنتی ہے
کیا اب بھی وہاں کے آنگن سے
پھولوں سے جنازے اُٹھتے ہیں
پردیس میں ایک مہاجر کے
کب سے یہ کان ترستے ہیں
اے کاش کوئی آ کر کہہ دے
کشمیر سے میرے کانوں میں
بدنام تھا جو کشمیر مرا
جنت کا نمونہ لگتا ہے
پھر چار چناری مہکی ہے
پُر امن ہوائیں چلتی ہیں
لوگوں کے دلوں میں جینے کی
بھر پور اُمنگیں جاگی ہیں
پھر جھیل کے ٹھنڈے پانی پر
بے خوف شکارے جھومیں ہیں
پھر امن رُتوں کا اک جھونکا
پیغام خوشی کا لے آئے
پھر سے جنت یہ کہلائے
پھر سے یہ جنت کہلائے

متعلقہ خبریں

تحریر:صوفی یوسف وادی کشمیر سے تعلق رکھنے والے نامورسینئر صحافی،قلمکار اور روزنامہ وادی کشمیر کے مدیر اعلیٰ غلام.

’’گری ہے جس پہ کل بجلی وہ میرا آشیاں کیوں ہو‘‘ تحریر: رشید پروین ؔ سوپور   اس سے پہلے کہ اصل موضوع پر آجاؤں.

افسانہ نگار: رئیس احمد کمار
بری گام قاضی گنڈ وہ صبح سے شام تک فون پہ لگی رہتی تھی ۔ میکے والوں سے گھنٹوں فون پر.

سید رشید جوہر …ونیل قاضی آباد ضلع کپوارہ میرے شہر میں صاف دِل کوئی بشر نہیں
اس بھیڑ میں کوئی بھی میرا ہمسفر.

افسانہ نگار:ڈاکتر نذیر مشتاق شبانہ نے کھڑکی سے باہر دیکھا ہلکی ہلکی بوندا باندی شروع ہوچکی تھی اس نے کھڑکی کے پٹ.